پریس ریلیز: خصوصی تقریب پاکستان ایران سفارتی تعلقات کے 76 سال مکمل انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز، اسلام آباد، اسلامی جمہوریہ ایران کے سفارت خانے اور اسلامی جمہوریہ ایران کے ثقافتی قونصل خانے کے تعاون سے خصوصی تقریب کا انعقاد کیا گیا

5424
پریس ریلیز
خصوصی تقریب
پاکستان ایران سفارتی تعلقات کے 76 سال مکمل
انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز، اسلام آباد، اسلامی جمہوریہ ایران کے سفارت خانے اور اسلامی جمہوریہ ایران کے ثقافتی قونصل خانے کے تعاون سے خصوصی تقریب کا انعقاد کیا گیا۔
فروری 8 , 2023
انسٹی ٹیوٹ آف سٹریٹیجک سٹڈیز اسلام آباد میں سنٹر فار افغانستان، مڈل ایسٹ اینڈ افریقہ نے اسلامی جمہوریہ ایران کے سفارتخانے کے تعاون سے پاکستان ایران سفارتی تعلقات کے 76 سال پر ایک خصوصی تقریب کا اہتمام کیا۔ “
مقررین میں شامل تھے: سفیر سہیل محمود، ڈائریکٹر جنرل، آئی ایس ایس آئی؛ محترمہ آمنہ خان، ڈائریکٹر سینٹر فار افغانستان مڈل ایسٹ اینڈ افریقہ؛ پاکستان میں اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر سید محمد علی حسینی: ایران میں پاکستان کے سفیر جناب رحیم حیات قریشی؛ پاکستان میں ایران کے سفارتخانے کے ثقافتی قونصلر جناب احسان خزاعی؛ ایمب رفعت مسعود، ایران میں پاکستان کے سابق سفیر؛ جناب حسینی ابراہیم خانی، سینئر فیلو، آئی  پی  آئی  ایس تہران؛ اور سفیر خالد محمود، چیئرمین، آئی  ایس  ایس  آئی۔ اس تقریب میں ایرانی نوادرات کی نمائش بھی شامل تھی۔
محترمہ آمنہ خان نے اس موضوع پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور ایران کے تعلقات وقتی آزمائش پر مبنی ہیں اور بھائی چارے، باہمی احترام اور مشکل کی گھڑی میں ایک دوسرے کی حمایت پر مبنی ہیں۔ دونوں ممالک کے درمیان 1950 میں طے پانے والا دوستی کا معاہدہ اسی تعلق کا عکاس تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان اور ایران کے تعلقات ہمہ جہت ہیں اور دونوں ممالک کے مفادات وسیع پیمانے پر ایک دوسرے سے ملتے ہیں – بشمول افغانستان کی صورتحال، دہشت گردی کے خلاف جنگ اور علاقائی رابطوں کے تناظر میں چین کے ساتھ تعلقات۔
اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ڈی جی آئی ایس ایس آئی ایمبیسڈر سہیل محمود نے کہا کہ پاکستان اور ایران کے سفارتی تعلقات 76 سال پرانے ہیں، پاکستان اور ایران کے عوام کے درمیان تعلقات صدیوں پرانے چلے آ رہے ہیں، جو مشترکہ عقیدے، تاریخ اور لسانی وابستگی کے ناقابل تغیر بندھن پر مبنی ہیں۔ ثقافتی جہت سب سے زیادہ واضح تھی، جیسا کہ پاکستان کے تہذیبی ورثے پر ایک مضبوط فارسی نقوش میں دیکھا جا سکتا ہے۔ پاکستان ایران تعلقات کو اس کے متعدد پہلوؤں میں تعلقات کو مزید گہرا کرنے کے مشترکہ عزم سے تقویت ملی۔ دونوں فریقوں کے باہمی مفادات دوطرفہ تجارت کو بڑھانے سے لے کر توانائی کے تعاون سے لے کر علاقائی اور بین الاقوامی امور پر تعاون تک تھے۔ پاکستانی عوام نے کشمیر کے منصفانہ مقصد کے لیے ایران کی اصولی حمایت کو سراہا۔ دونوں ممالک نے ایک پرامن اور مستحکم افغانستان میں بھی ایک اہم حصہ ڈالا کیونکہ اس سے علاقائی اقتصادی انضمام اور روابط کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے میں مدد ملے گی۔ دونوں ممالک نے فلسطین اور اسلامو فوبیا کا مقابلہ کرنے جیسے مسلم مقاصد کی بھی حمایت کی۔ انہوں نے علاقائی اور کثیرالجہتی فورمز پر بھی قریبی تعاون کیا اور شنگھائی تعاون تنظیم (SCO) میں ایران کی رکنیت باہمی تعاون کو مزید وسعت دینے کا باعث بنے گی۔ حالیہ برسوں میں، بڑھتے ہوئے دو طرفہ تبادلوں نے بہتر تعاون کے لیے ایک اتپریرک کا کام کیا ہے اور اقتصادی تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے اہم اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ تیزی سے بدلتے ہوئے عالمی اور علاقائی ماحول نے نئے چیلنجز جیسے خوراک اور ایندھن کے بحرانوں کے ساتھ ساتھ بڑھتے ہوئے تناؤ اور پولرائزیشن کو جنم دیا۔ اس سب کے تناظر میں یہ ضروری تھا کہ پاکستان ایران تعلقات مستحکم اور وسیع بنیادوں پر بڑھتے رہیں کیونکہ یہ خطے میں امن، سلامتی اور خوشحالی کا باعث بنے گا۔
سفیر سید محمد علی حسینی نے ایران پاکستان تعلقات کے بارے میں بات کرتے ہوئے اس بات پر روشنی ڈالی کہ دوطرفہ تعلقات مختلف شعبوں میں فروغ پا رہے ہیں۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ دونوں برادر ہمسایہ ممالک کے درمیان یکجہتی مختلف مشترکات اور روابط پر مبنی ہے جس نے مضبوط تعلقات کی راہ ہموار کی۔ انہوں نے مزید کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تبادلوں کا حجم رواں سال دو ارب ڈالر سے زائد تک پہنچ جائے گا۔ دونوں ممالک کے درمیان تعاون کی توسیع پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے توانائی کے شعبے کی نشاندہی بھی کی۔
سفیر رحیم حیات قریشی نے اس بات پر زور دیا کہ پاکستان اور ایران کے تعلقات پوری تاریخ میں مضبوط رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایران اور پاکستان کے درمیان لسانی تعلقات ہیں اور فارسی زبان کا جنوبی ایشیا میں زبردست اثر ہے۔ اقتصادی تعلقات کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے روشنی ڈالی کہ چھ سرحدی منڈیوں کے قیام کے لیے مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کیے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران نے اضافی سرحدی کراسنگ پوائنٹس بھی کھولے ہیں اور اس سے عوام کے درمیان رابطوں کو بڑھانے اور سرحدی نقل و حرکت کو آسان بنانے میں مدد ملے گی۔
ثقافتی کونسلر خزائی نے اپنے تاثرات میں کہا کہ ایران اور پاکستان کے درمیان قریبی تاریخی، ثقافتی، مذہبی، لسانی اور برادرانہ تعلقات ہیں۔ مضبوط ثقافتی وابستگیوں کی وجہ سے دونوں ممالک کو ‘ایک وطن، ایک ملک’ کہا جا سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایران اور پاکستان دونوں میں دوطرفہ تعلقات کو فروغ دینے کی بہت زیادہ صلاحیتیں ہیں اور ثقافتی تعاون دونوں ممالک کو مزید قریب لانے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔
سفیر رفعت مسعود نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ’’ہمارا پڑوس اہم ہے‘‘ اور اس تناظر میں پاکستان اور ایران کو ایک دوسرے کو بہتر طریقے سے جاننے کی کوششیں کرنی چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں حال پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے اور یہ بھی تسلیم کرنا چاہیے کہ ایران اور پاکستان کے درمیان باہمی انحصار ہیں۔ سرحدی تجارت کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہمیں اس شعبے میں مزید تعاون کرنا چاہیے کیونکہ ایران کے ساتھ تجارت سے پاکستان کو مزید منافع ملے گا۔
سفیر خالد محمود نے اپنے اختتامی کلمات میں کہا کہ ایران ایک آزمائشی دوست رہا ہے اور بھائی چارے کے رشتے مضبوط ہوتے جا رہے ہیں۔ اقتصادی مشغولیت کو وسعت دینے کے مقصد سے اقدامات کی رفتار کو تیز کرنا ضروری تھا۔ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ “یہ ایک قیمتی رشتہ ہے اور ہمیں اس کی حفاظت کرنی چاہیے کیونکہ یہ لوگوں کی امنگوں کی عکاسی کرتا ہے۔”