پریس ریلیز -آئی ایس ایس آئی نے ترکی کے یونس ایمرے انسٹیٹیوٹ کے ساتھ مفاہمت کی یادداشت کا اہتمام کیا۔

976

پریس ریلیز
آئی ایس ایس آئی نے ترکی کے یونس ایمرے انسٹیٹیوٹ کے ساتھ مفاہمت کی یادداشت کا اہتمام کیا۔
 مئی 29 2024

اپنے بین الاقوامی تعاون کو مزید تقویت دیتے ہوئے، انسٹی ٹیوٹ آف سٹریٹجک سٹڈیز اسلام آباد (آئی ایس ایس آئی) نے یونس ایمرے انسٹیٹیوٹ، ترکی کے ساتھ مفاہمت کی ایک یادداشت (ایم او یو) کا اہتمام کیا۔ تقریب میں اسلام آباد میں ترکی کے سفیر عزت مآب مہمت پیکاسی ڈاکٹر حلیل ٹوکر، یونس ایمرے اینسٹیٹسو کے کوآرڈینیٹر؛ ترکی، ڈاکٹر یوسف جنید، انقرہ میں پاکستان کے سفیر؛ سفیر سہیل محمود، ڈائریکٹر جنرل آئی ایس ایس آئی؛ محترمہ آمنہ خان، ڈائریکٹر سینٹر فار افغانستان مڈل ایسٹ اینڈ افریقہ؛ اور ان کی ٹیم نے شرکت کی۔

اپنے تعارفی کلمات میں آمنہ خان نے کہا کہ یہ ایم او یو پاکستان اور ترکی کے درمیان دیرینہ تعلقات کا منہ بولتا ثبوت ہے جو باہمی احترام اور مشترکہ تاریخ پر استوار ہے۔ آئی ایس ایس آئی اور یونس ایمرے انسٹیٹیوٹ کے درمیان تعاون کو مزید بڑھانے کے ساتھ ساتھ دونوں ممالک کے درمیان ثقافتی اور علمی تعاون کی نئی راہیں کھولنے کی طرف ایک قدم ہے۔

سفیر سہیل محمود نے اپنے ریمارکس میں ایم او یو کے اختتام کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے صدیوں پرانے اور ثقافتی اور مذہبی وابستگیوں کے ساتھ ساتھ مشترکہ تاریخ سے جڑے تعلقات کو مزید تقویت ملے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان اور ترکی دو ناگزیر شراکت دار ہیں اور اس طرح کے اقدامات سے دونوں حکومتوں کی کثیر جہتی شراکت داری کو مزید گہرا کرنے کی کوششوں کو تقویت ملتی ہے۔ انہوں نے یہ کہتے ہوئے اختتام کیا کہ اس مفاہمت نامے کا موثر نفاذ تحقیقی اور علمی شعبوں میں تعاون اور عوام سے لوگوں کے تبادلے کے وسیع مواقع فراہم کرے گا۔

سفیر مہمت پیکچی نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ترکی اور پاکستان کے درمیان تعلقات بہت خاص ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ مختلف جہتوں میں تعلقات کو مضبوط اور مزید وسعت دینے کے لیے مزید علمی تعاون کی ضرورت ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ پاکستان ترک تعلقات کے موجودہ مواقع اور مستقبل کے افق پر مزید مطالعہ کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر یوسف جنید نے اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایس ایس آئی اور یونس ایمری انسٹیٹسو کے درمیان مفاہمت کی یادداشت پر دستخط پہلے سے بہت اچھے تعلقات میں قریبی افہام و تفہیم کی راہ ہموار کرے گا۔ پاکستان اور ترکی کے درمیان تعلقات کے بارے میں ایک تاریخی نقطہ نظر کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے اس خصوصی تعلقات کا پیغام دونوں ممالک کے نوجوانوں تک پہنچانے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے ایم او یو پر عمل درآمد میں سفارت خانے کی جانب سے مکمل تعاون کا یقین دلایا۔

ڈاکٹر حلیل ٹوکر نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ یونس ایمرے انسٹیٹسو کی پاکستان میں نمایاں موجودگی ہے اور اس ایم او یو پر دستخط منفرد اہمیت کے حامل ہیں کیونکہ اس سے مختلف شعبوں میں مزید تعاون کی راہ ہموار ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے اقدامات سے پاک ترک تعلقات مزید بلندیوں پر جائیں گے۔

تقریب کا اختتام سفیر سہیل محمود اور ڈاکٹر حلیل ٹوکر کے ایم او یو پر دستخط کے ساتھ ہوا۔