پریس ریلیز: آئی ایس ایس آئی نے “مزاحمت کے مظاہرے: آرٹ کے ذریعے کشمیری شناخت کی نمائش” کے موضوع پر سیمینار اور نمائش کا انعقاد کیا

1505
پریس ریلیز
آئی ایس ایس آئی نے “مزاحمت کے مظاہرے: آرٹ کے ذریعے کشمیری شناخت کی نمائش” کے موضوع پر سیمینار اور نمائش کا انعقاد کیا
 فروری 1, 2024

یوم یکجہتی کشمیر کی یاد میں، انسٹی ٹیوٹ آف سٹریٹجک سٹڈیز اسلام آباد (آئی ایس ایس آئی) میں انڈیا سٹڈی سنٹر (آئی ایس سی) نے ایک سیمینار اور نمائش کا انعقاد کیا جس کا موضوع تھا “مزاحمت کے مظاہرے: آرٹ کے ذریعے کشمیری شناخت کی نمائش”۔ تقریب کا بنیادی مقصد سیاسی اور سفارتی طور سے آگے بڑھ کر کشمیریوں کی مزاحمت کو  ادبی فن اور ثقافت سے دیکھنا تھا۔

سیمینار میں کشمیر کی تحریک کی سیاسی شخصیات، ماہرین تعلیم، فنکاروں اور تھنک ٹینک کے ماہرین نے شرکت کی تاکہ کشمیریوں کی الگ شناخت اور کشمیریوں کی حق خود ارادیت کی جدوجہد کے بارے میں اپنی بصیرت کا اشتراک کیا جا سکے۔

اس موقع پر مہمان خصوصی محترمہ مشعال حسین ملک، ایس اے پی ایم آن ہیومن رائٹس اینڈ ویمن امپاورمنٹ تھیں۔ سیمینار کا آغاز سفیر سہیل محمود، ڈائریکٹر جنرل، آئی  ایس  ایس  آئی کے کلمات سے ہوا۔ اس کے بعد غیر قانونی بھارتی قبضے کے خلاف کشمیریوں کی مزاحمت پر ایک مختصر دستاویزی فلم چلائی گئی۔ مقررین میں شامل تھے: ڈاکٹر میمونہ خان، ایچ او ڈی فائن آرٹس ڈیپارٹمنٹ، ایف جے ڈبلیو یو، راولپنڈی؛ سردار وحید خان، کمشنر، مظفرآباد، آزاد جموں و کشمیر؛ اور جناب الطاف حسین وانی، چیئرمین کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل ریلیشنز ۔ نوجوان کشمیری فنکار زوہیب زمان نے حب الوطنی پر مبنی کشمیری گیت پیش کیا.

سفیر سہیل محمود نے اپنے کلمات میں مقررین، حاضرین اور آرٹ مقابلے میں حصہ لینے والے طلباء کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ فن مزاحمت کی روایت سرحدوں سے ماورا ہے اور بھارتی غیر قانونی قبضے اور مسلسل جبر کے تحت کشمیریوں کی سیاسی جدوجہد کو ظاہر کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج منعقد ہونے والی آرٹ نمائش فنکارانہ اظہار کی طاقت کو اجاگر کرتی ہے اور کشمیریوں کی جدوجہد کے جوہر کو سمیٹتی ہے۔
سفیر سہیل محمود نے مزید کہا کہ آج کی نمائش شاندار فنکارانہ صلاحیتوں اور کشمیری ثقافت اور ادب کے جشن پر مرکوز ہے۔ یہ ایک یاد دہانی کے طور پر بھی کام کرتا ہے کہ کشمیر صرف ایک علاقائی ہاٹ سپاٹ نہیں ہے، بلکہ عالمی برادری کے لیے بھی گہری تشویش کا معاملہ ہے۔ کشمیری عوام کے حق خودارادیت کو برقرار رکھتے ہوئے تنازعہ کا پرامن حل ناگزیر ہے۔

سفیر سہیل محمود نے اس بات پر زور دیا کہ قلم سے نکلنے والا ہر لفظ تنازعات سے متاثرہ سرزمین اور کشمیری عوام کے صدمے، لچک اور اجتماعی جدوجہد کی یاد دلاتا ہے۔ اس تناظر میں انہوں نے آغا شاہد علی کی شاعری، میر سہیل کے کارٹون، ملک سجاد کے فن پارے اور بشارت پیر اور مرزا وحید کے ناولوں کو یاد کیا۔ ڈی جی آئی ایس ایس آئی نے مشورہ دیا کہ فن کو محض برش اسٹروک کے طور پر نہ سمجھیں، بلکہ جذبات کے اظہار اور ایسے لوگوں کے زندہ تجربے کے طور پر جو جبر کو برداشت کر رہے ہیں لیکن پھر بھی اپنے حقوق کے لیے لڑ رہے ہیں۔ انہوں نے فنکاروں کو کشمیر کی ان کہانیوں کا مشعل راہ قرار دیا جو عالمی شعور کو چھوتی ہیں۔

محترمہ مشعال حسین ملک نے کشمیر کے ورثے اور ثقافت کو تلاش کرنے کے لیے نوجوان پاکستانی اور کشمیری فنکاروں کو نمائش میں شامل کرنے کے لیے آئی ایس ایس آئی کے اقدام کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ آج کی  تقریب انتہائی بامعنی انداز میں کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتی ہے اور حوصلے بلند کرنے میں مدد کرتی ہے۔ اس نے فنون کے لیے اپنا اپنا جذبہ شیئر کیا اور کشمیر کی خوبصورتی اور قبضے کے تحت اس کے لوگوں کی مشکلات دونوں کی عکاسی کرنے کے لیے اپنے ذاتی تعاون کو اجاگر کیا۔ انہوں نے کشمیری عوام کی جدوجہد کا فلسطینیوں سے موازنہ بھی کیا۔

محترمہ مشعال ملک نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ نئی دہلی نے دنیا کے سامنے ہندوستان کی ایک عمدہ تصویر پیش کرنے کے لیے اپنی ثقافتی سفارت کاری پر انحصار کیا ہے۔ جبکہ حقیقت میں مقبوضہ جموں و کشمیر میں آر ایس ایس کی زیر قیادت ’ہندوتوا‘ بریگیڈ کشمیری قیادت، کشمیری عوام اور یہاں تک کہ غیر ملکی سیاحوں پر حملے جاری رکھے ہوئے ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بھارت نے فلموں کے ذریعے کشمیر کے بارے میں منفی بیانیہ کا پرچار کیا ہے جس سے کشمیری ثقافت اور شناخت کی غلط تصویر پیش کی جاتی ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ ایک قابض کا انحصار اس بات پر ہے کہ وہ مقبوضہ لوگوں کی اصل ثقافت اور شناخت کو مٹا دے اور اس کی جگہ اپنی شناخت اور ثقافت لے لے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کشمیر میں نو آبادیاتی ڈھانچے کو تبدیل کرکے اور مقبوضہ علاقے میں ہندو ثقافت کو فروغ دینے کی کوشش کر رہا ہے۔

محترمہ ملک نے کہا کہ آرٹ  کے اظہار کی آزادی ہے، لیکن صرف ایک فیصد کشمیری  کاروباری حضرات کے پاس کشمیری ثقافت اور فن پارے برآمد کرنے کا لائسنس ہے۔ انہوں نے سوشل میڈیا کے ذریعے کشمیری آرٹ کو اکٹھا کرنے اور پوری دنیا میں پھیلانے کے لیے تجویز پیش کی۔ انہوں نے کشمیریوں کی جدوجہد کو پیش کرنے کے لیے مصنوعی ذہانت، تھیٹر، موسیقی، کمرشل فلموں، انفوگرافکس، لٹریچر، کشمیری فیسٹیولز اور کافی ٹیبل بک کے استعمال کی بھی سفارش کی۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اگر پرامن اظہار کے لیے کوئی جگہ باقی نہیں رہی تو کشمیریوں کے پاس صرف ایک ہی راستہ ہوگا، یعنی مسلح مزاحمت، ایک ایسا حق جسے بین الاقوامی قانون نے تسلیم کیا ہے۔

ڈاکٹر میمونہ خان نے اپنی پریزنٹیشن میں تاریخ کے مختلف مزاحمتی فنکاروں کے طاقتور فن پاروں کی نمائش کی۔ انہوں نے مشاہدہ کیا کہ کشمیریوں کی بہادر لیکن دل کو ہلا دینے والی جدوجہد جسمانی ذرائع سے جاری ہے لیکن ان کی مزاحمت کو پیش کرنے کے لیے آرٹ جیسے دیگر ذرائع کا بھی استعمال کیا جا رہا ہے۔ ان کا خیال تھا کہ کتابوں کی اقسام میں سے آرٹ کی کتاب سب سے زیادہ طاقتور ہے۔ انہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں مظالم ڈھانے والی نام نہاد ’جمہوری‘ قوم پر تنقید کی۔ انہوں نے کہا کہ آرٹ دنیا کو بیدار کرنے کا ایک اہم ذریعہ ہے اور اس لیے کشمیری فنکاروں کے کام کو محفوظ کرنے اور ان کی جدوجہد کے بارے میں بیداری پیدا کرنے کے لیے دنیا کے سامنے پیش کرنے کی ضرورت ہے۔

سردار وحید خان نے شرکاء کو کشمیری عوام کی تاریخی اور سیاسی جدوجہد سے آگاہ کیا۔ انہوں نے دنیا بھر میں مقیم کشمیریوں کے ساتھ کشمیریوں اور پاکستانیوں کے کشمیر کاز کے فروغ کے لیے مل کر کام کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ نمائش اور آرٹ کے ذریعے مزاحمت کو ظاہر کرنے کا یہ خیال قابل تعریف ہے۔ اس نے نوٹ کیا کہ مزاحمت چیلنجوں اور زندگی کے تجربات سے ڈھل رہی ہے جو ذہنی اور جسمانی صحت پر اثر انداز ہوتے ہیں۔ انہوں نے کشمیری عوام کی آزادی کے لیے آزاد جموں و کشمیر (اے جے کے) میں جاری ترقیاتی اور بحالی کے کاموں پر بھی روشنی ڈالی۔

جناب الطاف حسین وانی نے کہا کہ فن بین الاقوامی سطح پر پہچانا جاتا ہے اور اس کی وسعت وسیع ہے لہٰذا اسے فروغ دینا ضروری ہے۔ انہوں نے ممتاز کارٹونسٹ میر سہیل کے کام اور ان کے فن کے ذریعے کشمیر کی جدوجہد کی عکاسی پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے سفارش کی کہ پاکستان کو کشمیری عوام کے ساتھ یکجہتی کا اعادہ جاری رکھنا چاہیے۔ اس بات کو نوٹ کرتے ہوئے کہ بھارت نے اپنی غلط معلومات کی مہموں کا استعمال کرتے ہوئے پاکستان اور کشمیریوں کو شیطان بنا دیا ہے، انہوں نے کشمیری ثقافت کے تحفظ اور بھارت کی شیطانی مہم کے خلاف ایک مضبوط جوابی بیانیہ کو فروغ دینے کی تجویز پیش کی۔

تبصرے کے بعد آرٹ کے مقابلے جیتنے والوں میں انعامات اور اسناد تقسیم کی گئیں۔ سیمینار کا اختتام چیئرمین آئی ایس ایس آئی، سفیر خالد محمود کے ریمارکس کے ساتھ ہوا، جنہوں نے جموں و کشمیر کے تنازعہ کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں اور کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق پرامن حل کرنے پر زور دیا۔ سیمینار نے جموں و کشمیر تنازعہ کے بارے میں بیداری پیدا کرنے کی اہمیت اور جاری تنازعہ کو حل کرنے کے لیے بین الاقوامی توجہ کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔

بعد ازاں، شرکاء نے پینٹنگز، عکاسیوں، فن پاروں اور دستکاریوں کی نمائش دیکھی، جس کا افتتاح مہمان خصوصی ایس اے پی ایم مشعال حسین ملک نے کیا، دیگر مقررین اور معزز مہمان بھی ان کے ہمراہ تھے۔