پریس ریلیز – اسلام آباد کانکلیو 2023 سیشن 2 – ‘علاقائی منظر نامے کی تبدیلی: افغانستان سے مشرق وسطیٰ’

722

پریس ریلیز

اسلام آباد کانکلیو 2023
سیشن II سینٹر فار افغانستان، مڈل ایسٹ اینڈ افریقہ، انسٹی ٹیوٹ آف سٹریٹجک سٹڈیز اسلام آباد
’’پاکستان بدلتی ہوئی دنیا میں‘‘’علاقائی منظر نامے کی تبدیلی: افغانستان سے مشرق وسطیٰ”

اسلام آباد کانکلیو کا دوسرا ورکنگ سیشن بعنوان ’’تبدیلی علاقائی منظر نامے: افغانستان سے مشرق وسطیٰ تک‘‘ سنٹر فار افغانستان، مڈل ایسٹ اینڈ افریقہ کے زیر اہتمام 6 دسمبر 2023 کو انسٹی ٹیوٹ آف سٹریٹیجک سٹڈیز اسلام آباد میں منعقد ہوا۔

سیشن کے مقررین میں افغانستان میں پاکستان کے خصوصی نمائندے سفیر آصف درانی، افغان پارلیمنٹ کے ایوان زیریں کے سابق ڈپٹی اسپیکر جناب میرویس یاسینی، محترمہ یارا مراد، اسسٹنٹ ڈائریکٹر عصام فیرس انسٹی ٹیوٹ برائے عوامی پالیسی فار پبلک اینڈ انٹرنیشنل افیئرز شامل تھے۔، امریکن یونیورسٹی آف بیروت، محترمہ تمنا سالک الدین، یونائیٹڈ سٹیٹس انسٹی ٹیوٹ آف پیس میں ساؤتھ ایشیا پروگرامز کی ڈائریکٹر، مسٹر ایڈم وائنسٹائن، ڈپٹی ڈائریکٹر مڈل ایسٹ پروگرام، کوئنسی انسٹی ٹیوٹ فار ریسپانسبل۔ سٹیٹ کرافٹ اور محترمہ الزبتھ تھریلکلڈ، سینئر فیلو اور سٹیمسن سنٹر میں ڈائریکٹر ساؤتھ ایشیا۔ سیشن کی نظامت محترمہ آمنہ خان، ڈائریکٹر سینٹر فار افغانستان مڈل ایسٹ اینڈ افریقہ نے کی۔

آمنہ خان نے اپنے تعارفی کلمات میں کہا کہ مشرق وسطیٰ اور افغانستان کے جغرافیائی سیاسی منظر نامے نے حالیہ برسوں میں گہری تبدیلیاں دیکھی ہیں، جس کی نشاندہی علاقائی، عالمی اور داخلی حرکیات کے پیچیدہ تعامل سے ہوئی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ افغانستان میں پائیدار امن کا حصول عالمی برادری اور بڑے پیمانے پر خطے کے لیے ایک اہم تشویش ہے۔ کئی دہائیوں کے تنازعات، جس میں مختلف مفادات کے حامل متعدد اداکار شامل ہیں، نے تباہی اور عدم استحکام کا راستہ چھوڑا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ مشرق وسطیٰ، جسے اکثر جغرافیائی سیاسی پیچیدگیوں کا مرکز سمجھا جاتا ہے، ایسی تبدیلیوں سے گزر رہا ہے جو علاقائی حرکیات کو نئی شکل دے رہی ہے۔ منظم اسرائیلی جارحیت اور قبضے کو دیکھتے ہوئے، جو غزہ کی پٹی میں صرف نسل کشی اور جنگی جرائم کے مترادف ہو سکتا ہے اور یہ ایک سنگین معاملہ ہے اور اس کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کی جانی چاہیے – بلا شبہ علاقائی اور عالمی امن کے لیے بڑے اثرات مرتب ہوں گے۔ غزہ کے بدقسمت واقعات کے درمیان، مشرق وسطیٰ میں سیاسی اور اقتصادی منظر نامے میں ایک اہم تبدیلی آ رہی ہے، جس میں بڑی سفارتی تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں، جیسا کہ ابراہم معاہدے اور چار فریقی اتحاد، جس نے خطے کے سیاسی منظر نامے کو تبدیل کر دیا ہے۔
سفیر آصف درانی نے اپنے کلیدی خطاب میں کہا کہ اس موجودہ موزیک کو بنانے میں بڑی طاقتوں کی دشمنیوں نے اہم کردار ادا کیا ہے۔ ٹوٹنا اگر سوویت یونین کے نتیجے میں یک قطبی دنیا کی تشکیل ہوئی۔ غزہ کے حالیہ بحران نے عالمی تقسیم کو تیز کر دیا ہے اور یہ ظاہر کرتا ہے کہ ایک چھوٹی چنگاری کیسے آگ میں بدل سکتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کا جغرافیہ جغرافیائی سیاسی اور جیو اکنامک اہمیت کا حامل ہے کیونکہ یہ مشرق وسطیٰ کے لیے بھی ایک گیٹ وے ہے۔ افغانستان کی صورتحال پاکستان پر اثرانداز ہوتی ہے اور افغانستان میں نائن الیون کے بعد کی صورتحال کے ملک کے لیے بہت سے منفی اثرات مرتب ہوئے کیونکہ اس نے ہمیں معاشی طور پر اور سیکیورٹی کے حوالے سے بھی متاثر کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان میں تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے حملوں میں اضافہ ہوا ہے۔ دوسری جانب افغانستان کے ساتھ تجارت میں اضافہ ہوا ہے اور خطے کے اندر تجارت میں بھی نمایاں اضافہ ہوا ہے۔ سفیر درانی نے مزید کہا کہ اسرائیل حماس کے درمیان جاری تنازع سے افغانستان عالمی برادری کی ترجیحی فہرست میں نیچے چلا گیا ہے۔ افغانستان کی صورتحال پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے کہا کہ افغانستان میں 95 فیصد لوگ خط غربت سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں اور انسانی امداد بھی متاثر ہے۔ مشرق وسطیٰ سے پاکستان کی قربت پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس خطے کا پاکستان کی سیاسی اور جیو اکنامکس پر گہرا اثر ہے۔ اس ملک کو مشرق وسطیٰ سے ترسیلات زر موصول ہوتی ہیں اور سعودی ایران سے تعلقات درست سمت میں ایک قدم ہے۔ انہوں نے یہ کہتے ہوئے نتیجہ اخذ کیا کہ ہوشیار سفارت کاری سے پاکستان افغانستان اور مشرق وسطیٰ سے پیدا ہونے والے چیلنجوں پر قابو پا سکتا ہے۔

جناب میرویس یاسینی نے ’افغانستان میں پائیدار امن کے حصول‘ پر بات کی۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان میں پیچیدہ چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے ایک باریک بینی اور کثیر جہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔ اگست 2021 میں بغیر کسی خونریزی کے افغان طالبان کی ہموار منتقلی کو تسلیم کیا جانا چاہیے، اس کے ساتھ سیکیورٹی کے موجودہ تسلی بخش حالات اور لچکدار افغان معیشت کو بھی تسلیم کیا جانا چاہیے۔ پڑھے لکھے طبقے کا بار بار نکلنا دانشورانہ وسائل کے لیے خطرہ ہے، جو کہ کم عمر اور بڑی عمر کے تعلیم یافتہ افراد کو برقرار رکھنے کے لیے مراعات کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔ ممکنہ انسانی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے سردیوں سے پہلے پناہ گزینوں کی تیزی سے واپسی ضروری ہے۔ ایک جامع کوشش ضروری ہے، جس میں سلامتی، معاشی استحکام، آئینی ترقی، تعلیم، شمولیت، اور تعلیم یافتہ طبقے کی برقراری شامل ہے، یہ سب مہاجرین کی وطن واپسی کی فوری ضرورت پر زور دیتے ہیں۔

محترمہ یارا مراد نے ‘مشرق وسطیٰ میں ارتقائی حرکیات’ پر بات کرتے ہوئے کہا کہ 15 ستمبر 2020 کو متحدہ عرب امارات/بحرین اور اسرائیل کے درمیان ابراہم معاہدے پر دستخط کے بعد جس کا مقصد عرب ممالک اور اسرائیل کے درمیان سفارتی معمول کو فروغ دینا اور خطے میں اقتصادی باہمی انحصار کو آسان بنانے کے لیے، ایک تاثر تھا کہ ‘فلسطینی مسئلہ’ ایک بھولے ہوئے تنازعہ میں تبدیل ہو رہا ہے۔ تاہم، مسئلہ فلسطین ایک بار پھر سب سے آگے ہے۔ اور اس سے اسرائیل کے ساتھ معمول پر آنے والی کسی بھی پیش رفت پر اثر پڑے گا۔ انہوں نے مزید وضاحت کی کہ عرب رہنماؤں میں یہ احساس تھا کہ انہیں اسرائیل کے ساتھ نمٹنے کے دوران فلسطینی ریاست کے مسئلے کو حل کرنا ہوگا، اور یہ کئی عربوں کی تشکیل کا مرکز بن گیا ہے۔ خطے اور دنیا بھر میں فلسطین کے حامی یکجہتی کی مضبوط تحریکیں دوبارہ ابھری ہیں اور ایک بار پھر ریاستیں اسرائیل اور فلسطین کے درمیان دو ریاستی حل پر زور دے رہی ہیں۔

ایڈم وائنسٹائن نے ‘افغانستان اور خطے میں غیر سیکیورٹی چیلنجز’ کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور افغانستان کے درمیان غیر متزلزل روابط کو تسلیم کرتے ہوئے، پاک امریکہ تعلقات پاک فوج کے پیراڈائم سے ہٹ گئے ہیں۔ جب کہ افغانستان میں سیکیورٹی واپس آگئی ہے، پاکستان کے اندر کے علاقوں، خاص طور پر خیبر پختونخواہ میں، بدستور عدم تحفظ کا سامنا ہے۔ دونوں ممالک کی معیشتیں اور عوام ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں، چیلنجز اور مواقع پیش کرتے ہیں۔ خطے میں چار بڑے غیر روایتی سلامتی کے بحرانوں میں انسانی/معاشی مسائل، آب و ہوا کے خدشات، سابقہ ​​دو اور سیاسی حسابات سے چلنے والی ہجرت، اور انسانی حقوق، خاص طور پر خواتین کے حقوق شامل ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ افغانستان میں انسانی اور معاشی چیلنجز کے حوالے سے امداد اور جنگی معیشتوں میں کمی آئی ہے، غیر ملکی زرمبادلہ کے منجمد ذخائر اور خاطر خواہ فنڈز قانونی تنازعات سے مشروط ہیں۔

محترمہ الزبتھ تھریلکلڈ نے ’پائیدار ترقی کے لیے اقتصادی اور علاقائی رابطے بڑھانے‘ پر بات کی۔ ان کا خیال تھا کہ اس وقت 97 فیصد سے زیادہ افغان غربت میں مقیم ہیں، جس میں آبادی کا تقریباً دو تہائی حصہ بقا کے لیے انسانی امداد پر انحصار کرتا ہے۔ مدد کی مسلسل ضرورت واضح ہے۔ تاہم، بنیادی سوال اس بات کو یقینی بنانے کے گرد گھومتا ہے کہ یہ رقوم اپنے مطلوبہ وصول کنندگان تک پہنچیں اور غلط استعمال نہ ہوں۔ انہوں نے مزید کہا کہ طویل مدتی پائیداری کے لیے ذریعہ معاش پیدا کرنے پر زور دینے والے انسانی امداد کے ماڈل کی طرف تبدیلی کے لیے تجاویز مل رہی ہیں، جس سے کثیرالجہتی اداروں کی توجہ مبذول ہو رہی ہے۔ انہوں نے سماجی اور اقتصادی حرکیات میں ان کے اہم کردار کو تسلیم کرتے ہوئے خواتین کو افرادی قوت میں حصہ لینے کی اجازت دینے کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔ پاکستان کے ساتھ افغانستان کی صورتحال کی باہم مربوط نوعیت کو تسلیم کیا جاتا ہے، خاص طور پر تجارت کے میدان میں۔ تجارت طالبان کے ساتھ فائدہ اٹھانے کے ایک طاقتور آلے کے طور پر ابھرتی ہے، لیکن بند ہونے کی صورت میں تاجروں پر غیر ضروری دباؤ اور مالی نقصانات کو روکنے کے لیے کھلی سرحدوں کو برقرار رکھنا ضروری ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ علاقائی گروپوں کے ساتھ تعلقات قائم کرنے میں طالبان کی کامیابی پیچیدگی میں اضافہ کرتی ہے۔ سرحدوں کی بندش طالبان کو متبادل اتحاد تلاش کرنے پر آمادہ کر سکتی ہے، جس میں وسیع تر خطے میں استحکام کے لیے تجارتی حرکیات کے انتظام میں نازک توازن پر زور دیا جا سکتا ہے۔

محترمہ تمنا سالک الدین نے ’پائیدار ترقی کے لیے اقتصادی اور علاقائی رابطوں کو مضبوط بنانے‘ پر بات کرتے ہوئے کہا کہ اس بات کو تسلیم کرنا کہ موجودہ عالمی منظر نامے میں معاشی تحفظات سب سے اہم ہیں۔ تاریخی طور پر، پاکستان سمیت جنوبی ایشیا نے کم اقتصادی انضمام کا تجربہ کیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ افغانستان میں امریکی موجودگی کے خاتمے کے ساتھ ہی حرکیات میں مزید تبدیلی آئی ہے، اور پاکستان خود کو دونوں اہم اقتصادی شراکت داروں، امریکہ اور چین کے ساتھ تعلقات کے درمیان توازن برقرار رکھتا ہے۔ سرمایہ کاری کے لیے سازگار ماحول کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے، انہوں نے تجویز پیش کی کہ پاکستان کو سعودی عرب جیسے ممالک سے سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے مسابقتی ہنر مند افرادی قوت جیسی اندرونی صلاحیتوں کو مضبوط بنانے پر توجہ دینی چاہیے۔ صرف مذہبی رشتوں پر انحصار کرنے کے بجائے، انہوں نے کہا کہ پاکستان کو اپنی اندرونی طاقتوں کی تعمیر اور مضبوطی کو ترجیح دینی چاہیے۔ مزید برآں، سیاسی تنازعات کے باوجود، بھارت کے ساتھ تجارت کو اپنانا باہمی فائدے کا باعث بن سکتا ہے، جس کی مثال تنازعات کے باوجود تجارت کو برقرار رکھنے کے چینی نقطہ نظر سے ملتی ہے۔ یہ نقطہ نظر نہ صرف توانائی کے بحران کو کم کرے گا بلکہ اقتصادی ترقی کو بھی فروغ دے گا۔

سیشن کا اختتام سوال و جواب کے سیشن پر ہوا۔