پریس ریلیز – بھارتی خارجہ پالیسی میں حالیہ رجحانات پر ایک ان ہاؤس سیشن

4962

پریس ریلیز
بھارتی خارجہ پالیسی میں حالیہ رجحانات پر ایک ان ہاؤس سیشن

انسٹی ٹیوٹ آف اسٹرٹیجک اسٹڈیز (آئی ایس ایس آئی) میں انڈیا اسٹڈی سینٹر (آئی ایس سی) نے “ہندوستانی خارجہ پالیسی میں حالیہ رجحانات” پر مرکوز ایک ان ہاؤس سیشن کا اہتمام کیا۔ سیشن میں پریکٹیشنرز، سابق سفارت کاروں، ماہرین تعلیم، سکالرز اور تھنک ٹینکس سے وابستہ محققین جن میں سفیر ضمیر اکرم؛ سفیر مسعود خالد؛ سفیر آصف درانی؛ جناب الیاس محمود نظامی، ڈائریکٹر جنرل (سارک)؛ ڈاکٹر عاصمہ شاکر خواجہ؛ ڈاکٹر سلمیٰ ملک؛ ڈاکٹر الطاف حسین وانی; محترمہ حمیرا اقبال؛ اور محترمہ نور العین نے شرکت کی۔

آئی ایس ایس آئی کے شرکاء میں ایمبیسیڈر سہیل محمود ڈائریکٹر جنرل آئی ایس ایس آئی اور انڈیا اسٹڈی سینٹر کے ڈائریکٹر اور ممبران شامل تھے۔

شرکاء نے موضوعات کی ایک وسیع رینج کا احاطہ کیا- بشمول ہندوستانی خارجہ پالیسی میں تسلسل اور تبدیلی؛ ہندوستانی خارجہ اور سیکورٹی پالیسیوں کے روایتی اور نئے محرک؛ ہندوستانی معیشت کے اثرات اور اس کی موجودہ ترقی کی رفتار؛ موجودہ تناظر میں ‘سٹریٹجک خود مختاری’ کی مطابقت اور افادیت؛ ’بڑی طاقت‘ کے درجے کے لیے ہندوستان کی جستجو؛ عظیم طاقت کے مقابلے میں نئی ​​دہلی کی کرنسی اور پوزیشننگ؛ ‘پڑوسی سب سے پہلے’ پالیسی کی حیثیت اور علاقائی مشغولیت میں فرق؛ کثیرالجہتی سے وابستگی میں کمی اور ’منی لیٹرل ازم‘ کی طرف بڑھنا؛ جموں و کشمیر تنازعہ کو پرامن طریقے سے حل کرنے میں مسلسل مداخلت؛ اور علاقائی تعاون کے لیے سارک کے عمل کو روکنا۔

اندرونی اور بیرونی جہتوں میں ’ہندوتوا‘ نظریے کی پیروی کا جائزہ لیا گیا تھا اور علاقائی امن و سلامتی پر اس کے اثرات کا بھی جائزہ لیا گیا۔ اس نظریاتی بڑھوتری کے علاوہ، شرکاء نے ہندوستان میں خارجہ پالیسی کے بعض مسائل کو گھریلو سیاسی فائدے کے لیے استعمال کرنے کے رجحان کو اجاگر کیا، خاص طور پر انتخابات سے پہلے۔ پاکستان کے لیے مشورہ یہ تھا کہ ہوشیار رہیں کیونکہ ہندوستان 2023 میں کئی اہم ریاستی انتخابات اور 2024 میں لوک سبھا کے انتخابات سے گزر رہا ہے۔

آئی ایس ایس آئی کے چیئرمین سفیر خالد محمود نے اختتامی کلمات کہے۔