پریس ریلیز – کتابوں کی رونمائی کی تقریب “قراقرم کے اس پار: چینی اور پاکستانی سکالرز کے درمیان ایک تصویری مکالمہ”

4922

پریس ریلیز
چائنا پاکستان اسٹڈی سینٹر (سی پی ایس سی)
کتابوں کی رونمائی کی تقریب

“ماؤ زے تنگ اور جدید چین”
“چینی کمیونسٹ پارٹی کا ترقیاتی مسائل کے حل کا انداز”
“قراقرم کے اس پار: چینی اور پاکستانی سکالرز کے درمیان ایک تصویری مکالمہ”

 مارچ07  2023

انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز اسلام آباد (آئی ایس ایس آئی) میں چائنا پاکستان اسٹڈی سینٹر (سی پی ایس سی) نے چینی مصنفین کی تصنیف کردہ اور پاکستانی مصنفین کے ذریعہ ترجمہ کردہ تین کتابوں کی کتاب کی رونمائی کی تقریب کی میزبانی کی۔ ان کتابوں میں “ماؤزے تنگ اور ہم عصر چین”، “چینی کمیونسٹ پارٹی ترقی کے مسئلے کو کیسے منظم کرتی ہے”، اور “قراقرم سے آگے: چینی اور پاکستانی اسکالر کے درمیان ایک تصویری مکالمہ” شامل ہیں۔ تقریب کے مہمان خصوصی سینیٹر ڈاکٹر مصدق ملک وزیر مملکت برائے پیٹرولیم تھے۔ اس موقع پر مہمانِ خصوصی جناب فہد ہارون، وزیر مملکت/ایس اے پی ایم پبلک کمیونیکیشن اور ڈیجیٹل پلیٹ فارم تھے۔
چین کی سابق سفیر نغمانہ ہاشمی اور بحریہ یونیورسٹی کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر حسن داؤد بٹ نے کتابوں کا جائزہ لیا۔ چائنا پاکستان اسٹڈی سینٹر کے ڈائریکٹر ڈاکٹر طلعت شبیر نے مہمانوں کا خیرمقدم کیا اور عوام سے عوام کے روابط استوار کرنے میں ادب کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔

ڈی جی آئی ایس ایس آئی کے ایمبیسڈر سہیل محمود نے اپنے خطاب میں اس بات پر زور دیا کہ چین کے ساتھ پاکستان کے تعلقات اس کی خارجہ پالیسی کا ’’بنیادی پتھر‘‘ ہیں۔ انہوں نے پاک چین ’آل ویدر اسٹریٹجک کوآپریٹو پارٹنرشپ‘ کی اہم خصوصیات اور بڑھتے ہوئے راستے پر روشنی ڈالی۔ چینی انقلاب اور چین کی جدیدیت میں چیئرمین ماؤ کا کردار؛ چین کی سماجی و اقتصادی ترقی میں سی پی سی کا کردار؛ اور اس طرح کی تقریبات کے ذریعے پاک چین تعلقات کی عوامی سفارت کاری کے جہت کو مزید مستحکم کرنے کی اہمیت۔

ایمبیسڈر نغمانہ ہاشمی نے اپنے تاثرات میں کتاب “چین ماؤزے تنگ اور جدید” کے حوالے سے ماؤ کے وژن پر زور دیا۔ اس نے دلیل دی کہ جدید چین کو سمجھنے میں تاریخ ہمیشہ اہم رہی ہے۔ ملک کا وژن دنیا بھر کی دیگر اقوام سے مختلف ہے۔ ان فلسفوں کو سمجھنا مناسب ہے جن کی پیروی چین خوشحالی کی طرف اپنے سفر میں کرتا ہے۔ سفیر ہاشمی نے کہا کہ جب کوئی ان فلسفیانہ تصورات کو سمجھنے کے قابل ہو جاتا ہے تو کوئی اندازہ لگا سکتا ہے کہ چین کس طرف جا رہا ہے۔

ڈاکٹر حسن داؤد بٹ نے اپنی تفصیلی پریزنٹیشن میں موجودہ بین الاقوامی سیاست میں چین کی جیو اسٹریٹجک، جیو اکنامک اور جیو پولیٹیکل اہمیت پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے زیر نظر کتاب سے مثالیں دیتے ہوئے کہا کہ چین کی کمیونسٹ پارٹی ملک کو درست سمت میں لے جانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔

محترمہ پینگ چنکسو، چارج ڈی افیئرز، نے پاکستان اور چین کے مضبوط تعلقات پر روشنی ڈالی۔ قوموں کے تصورات کو سمجھنے میں ادب نے ہمیشہ غالب کردار ادا کیا ہے۔ اردو میں ترجمہ شدہ یہ کتابیں دونوں ممالک کے ایک دوسرے کو سمجھنے کے عزم کی عکاسی کرتی ہیں۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اس طرح کی تقریبات عوام سے لوگوں کے تبادلے کو بڑھانے میں تعمیری کردار ادا کریں گی۔

ایس اے پی ایم جناب فہد ہارون نے تسلیم کیا کہ چین کی موجودہ قیادت اس کی پیروی کر رہی ہے جس کا ماؤ نے دہائیوں پہلے دیکھا تھا۔ انہوں نے چین کے ساتھ تعلقات کو مزید گہرا اور وسیع کرنے کے لیے پاکستان کے عزم کا اعادہ بھی کیا۔

سینیٹر ڈاکٹر مصدق ملک نے اپنے خطاب میں موجودہ بین الاقوامی حرکیات پر روشنی ڈالی اور بتایا کہ چین کس طرح جرأت مند اور بصیرت مند قیادت میں ایک لچکدار قوم کے طور پر ابھر رہا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ چین کے رہنماؤں نے اپنے ملک کے بہترین مفاد میں خدمات انجام دی ہیں اور ترقی اور ترقی کا ایک منفرد راستہ طے کیا ہے، جس کی تقلید کی جانی چاہئے۔

تقریب کے اختتام پر چیئرمین بی او جی ایمبیسیڈر خالد محمود نے اپنے اختتامی کلمات کہے، جس کے بعد مقررین کو یادگاری تحفہ پیش کیا گیا۔