​پریس ریلیز – گندھارا سمپوزیم 2023 کا دوسرا دن: “ثقافتی سفارت کاری: پاکستان میں گندھارا تہذیب اور بدھ مت کے ورثے کا احیاء” اسلام آباد، 12 جولائی، 2023 گندھارا سمپوزیم 2023 کا دوسرا دن

3034

`پریس ریلیز

گندھارا سمپوزیم 2023 کا دوسرا دن: “ثقافتی سفارت کاری: پاکستان میں گندھارا تہذیب اور بدھ مت کے ورثے کا احیاء” اسلام آباد، 12 جولائی، 2023 گندھارا سمپوزیم 2023 کا دوسرا دن:

“ثقافتی ڈپلومیسی: پاکستان میں گندھارا تہذیب اور بدھ مت کے ورثے کو زندہ کرنا” کا آغاز “گندھارا کی روح کی تلاش: ماضی کا تحفظ اور مستقبل کو روشن کرنا” کے چوتھے اجلاس سے ہوا۔ سیشن کی نظامت ڈاکٹر اسماء ابراہیم، ڈائریکٹر اسٹیٹ بینک میوزیم، ہیڈ آف آئی سی او ایم پاکستان نے کی۔ سیشن کے مقررین پروفیسر روتھ ینگ، پروفیسر آف آرکیالوجی، یونیورسٹی آف لیسٹر، یو کے تھے۔ محترمہ یی یون جنگ، سینئر محقق، ثقافتی ورثہ فاؤنڈیشن، جنوبی کوریا؛ نشانتھا پشپا کمارا، دیر من۔ بدھاسنا مذہبی اور ثقافتی امور، سری لنکا؛ پروفیسر ڈاکٹر ہردیا رتنا بجراچاریہ؛ سابق وائس چانسلر یونیورسٹی، نیپال؛ اور پروفیسر ژیانگ ڈیباؤ، پروفیسر سکول آف انٹرنیشنل جرنلزم اینڈ کمیونیکیشن، بیجنگ یونیورسٹی۔

پینلسٹس نے اس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ ثقافتی ورثے کے مقامات مذہبی رسومات کے ساتھ ساتھ مذہبی اور قومی شناخت کی تعمیر کے لیے بھی بہت اہم ہیں۔ مقررین نے گندھارا ورثے کے تحفظ، تحفظ اور فروغ میں مقامی کمیونٹیز کے اہم کردار پر زور دیا۔ انہوں نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ گندھارا کی حقیقی روحیں روزہ رکھنے والے سدھارتا کے پتھر کے مجسمے، ٹیکسلا کی علمی فضیلت اور گندھارا کی ذہن ساز، عملی، تخیلاتی، تخلیقی اور جرات مندانہ فطرت میں جھلکتی ہیں۔ تحفظ کے مقاصد کے لیے نئی ڈیجیٹل ٹکنالوجی اور کیمیکل لانے میں تعاون کی تجویز پیش کی گئی۔ اس بات پر بھی روشنی ڈالی گئی کہ گندھارا نہ صرف ایک مواصلاتی مہم ہے بلکہ نہ صرف بین الاقوامی سامعین کے لیے بلکہ خود پاکستانیوں کے لیے جدید کاری کی ایک ہمہ جہت مہم ہے۔

اختتامی سیشن میں، ڈاکٹر عبدالصمد کی طرف سے سمپوزیم کا خلاصہ پیش کیا گیا جس میں 2 روزہ پینل ڈسکشن، گول میز اور اندرون ملک مباحث کے اہم نکات پر روشنی ڈالی گئی۔ اس کے بعد ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی کے اختتامی تبصرے ہوئے، جنہوں نے بین المذاہب ہم آہنگی پر زور دیا اور گندھارا کی سیاحت کو فروغ دینے کے بارے میں اپنے خیالات اور تجاویز کا اشتراک کیا۔

مہمان خصوصی وزیر برائے مذہبی امور و بین المذاہب سینیٹر طلحہ محمود نے خطاب کیا۔ سینیٹر طلحہ محمود نے اشارہ کیا کہ پائیدار سیاحتی اقدامات کو فروغ دینا، خاص طور پر گندھارا سے متعلق، ہمارے اہم اہداف میں سے ایک ہونا چاہیے۔ انہوں نے پاکستانی معاشرے کی مہمان نوازی پر روشنی ڈالی اور پاکستان میں سلامتی کے بارے میں منفی پروپیگنڈے کو دور کیا۔ بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینے والے پاکستان کے نشان کے طور پر، انہوں نے مختلف عقائد اور ثقافتوں کے لوگوں کو پاکستان کا دورہ کرنے کی دعوت دی۔

آخر میں ڈی جی آئی ایس ایس آئی ایمبیسیڈر سہیل محمود نے تمام مہمانوں کا شکریہ کیا۔ انہوں نے تعلیمی سیشن کی تکمیل پر منتظمین اور شرکاء کو مبارکباد پیش کی، جنہوں نے گندھارا تہذیب کے مختلف پہلوؤں پر گہرائی سے غور و خوض کیا، اور ایسے نکات پیش کیے جو ایک مناسب حکمت عملی اور ایکشن پلان بنانے میں فائدہ مند ثابت ہوں گے۔ انہوں نے غیر ملکی شرکاء اور پاکستانی سکالرز اور ماہرین کا بصیرت انگیز پیشکشوں اور فکر انگیز گفتگو پر خصوصی شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ یہ سمپوزیم، ایک ملٹی اسٹیک ہولڈر انٹرپرائز، تمام متعلقہ محکموں اور اداروں کے درمیان بہترین تعاون اور ہم آہنگی کی وجہ سے ایک شاندار کامیابی تھی۔