کرٹن ریزر: “جمہوریہ کوریا اور پاکستان کے درمیان دوستی کے 40 سال – ماضی، حال اور مستقبل” کے موضوع پر سیمینار

1578

کرٹن ریزر
“جمہوریہ کوریا اور پاکستان کے درمیان دوستی کے 40 سال – ماضی، حال اور مستقبل” کے موضوع پر سیمینار
اکتوبر 25 2023

انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز اسلام آباد (آئی ایس ایس آئی)، جمہوریہ کوریا کے سفارت خانے (آر او کے) کے تعاون سے، 25 اکتوبر 2023 کو “پاکستان اور کوریا کے درمیان دوستی کے 40 سالہ ماضی، حال اور مستقبل” کے موضوع پر ایک سیمینار منعقد کر رہا ہے۔

پاکستان اور جمہوریہ کوریا نے ایک مضبوط شراکت داری قائم کی ہے، جس میں اسٹریٹجک تعاون، اقتصادی تعاون اور ثقافتی تبادلے شامل ہیں۔ دونوں ممالک نے باہمی ترقی اور خطے میں امن پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے دوطرفہ تعلقات میں مسلسل توسیع دیکھی ہے۔ پاکستان میں جنوبی کوریا کی مضبوط سرمایہ کاری، خاص طور پر انفراسٹرکچر، ٹیکنالوجی اور مینوفیکچرنگ کے شعبوں میں، پاکستان کی اقتصادی ترقی اور جدید کاری میں بہت زیادہ معاون ہے۔ دوطرفہ تعاون معاشیات سے آگے بڑھتا ہے، کیونکہ دونوں ممالک نے تعلیمی اور ثقافتی اقدامات میں مصروف ہیں، دونوں لوگوں کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنایا ہے۔ جیسا کہ جنوبی کوریا کی “نئی جنوبی پالیسی” اور پاکستان کی “اینگیج ایسٹ” کی حکمت عملی آپس میں مل رہی ہے، یہ شراکت داری نہ صرف اس میں شامل ممالک کے لیے بلکہ وسیع تر ایشیا پیسیفک خطے کے لیے اور بھی اہم بننے والی ہے۔

پاکستان-آر او کے تعلقات، مشترکہ اقدار اور خواہشات پر قائم ہیں، بین الاقوامی تعاون کی صلاحیت کی مثال دیتے ہیں۔ پاکستان جنوبی کوریا کو اقتصادی ترقی اور تکنیکی ترقی کی تلاش میں ایک قابل قدر اتحادی کے طور پر دیکھتا ہے، جب کہ جنوبی کوریا پاکستان کو خطے میں ایک اسٹریٹجک پارٹنر کے طور پر تسلیم کرتا ہے۔ دونوں ممالک نے اقوام متحدہ سمیت مختلف بین الاقوامی فورمز پر قریبی تعاون کرکے عالمی امن اور سلامتی کے لیے اپنے عزم کا اظہار کیا ہے۔ جیسا کہ دونوں ممالک مل کر کام کرتے رہتے ہیں، وہ نہ صرف عالمی سطح پر اپنے اپنے مقام کو بلند کرتے ہیں بلکہ ایشیا کے استحکام اور خوشحالی میں بھی اپنا کردار ادا کرتے ہیں۔ پاکستان اور کوریا کی شراکت داری دنیا بھر کے ممالک کے درمیان مضبوط تعلقات قائم کرنے میں سفارت کاری، تجارت اور ثقافتی تبادلوں کی طاقت کا ثبوت ہے۔

اس پس منظر میں، آئی ایس ایس آئی جمہوریہ کوریا کے سفارت خانے کے ساتھ مل کر، جمہوریہ کوریا اور اسلامی جمہوریہ پاکستان کے درمیان سفارتی تعلقات کے 40 سالہ سفر کے موقع پر ایک سیمینار کا انعقاد کر رہا ہے۔ اس تقریب میں دونوں ممالک کے ممتاز سفارت کاروں، ماہرین تعلیم اور ماہرین کو اکٹھا کیا گیا ہے جو جمہوریہ کوریا اور پاکستان کے درمیان سفارتی تعلقات کے تاریخی سفر پر اپنے اکاؤنٹس کا اشتراک کریں گے اور اس تعلقات کو مزید مضبوط بنانے اور اپنے تعاون کو متنوع بنانے کے طریقوں اور ذرائع پر تبادلہ خیال کریں گے۔

سیمینار میں کامیابی کی کلیدی کہانیوں کو اجاگر کیا جائے گا، جو تجارت، سرمایہ کاری، ٹیکنالوجی، تعلیم اور ثقافتی تبادلوں جیسے شعبوں میں ہونے والی بے پناہ پیش رفت کو ظاہر کرے گا۔ افتتاحی تقریب میں توانائی، بجلی اور پیٹرولیم کے وفاقی وزیر جناب محمد علی کا کلیدی خطبہ پیش کیا جائے گا اور اس میں جمہوریہ کوریا کے سفیر پارک کیجون کے استقبالیہ کلمات اور سفیر سہیل محمود، ڈی جی کے خیرمقدمی کلمات شامل ہوں گے۔ آئی ایس ایس آئی دونوں ورکنگ سیشنز کے دوران معزز مقررین تاریخی تعلقات کے ماضی کی عکاسی کریں گے اور دونوں ممالک کے ماہرین جنوبی کوریا اور پاکستان کے درمیان تعلقات کے تاریخی سفر پر اپنی بصیرت کا اظہار کریں گے۔ ڈاکٹر طلعت شبیر سیمینار کی نظامت کریں گے۔